Transgender: A Biological issue or a Linguistic One?

It was only a short while back in 2011 that the Government of Pakistan added a third category of gender in the National Identity Cards, which means for the initial sixty-four years an entire gender had no identity. But the identity crisis for the trans community dates longer than the history of this country, it dates back to the British Raj which laid down the concrete foundations through which the origins of an entire community were to be erased for centuries to come.

According to the rules regarding societal proprieties being trans was an unnatural and immoral state of being and any person found ‘guilty’ of the sin was to be severely punished. It is important to note here that before the British Raj the trans community held a prestigious position in the Indian culture with associations to good luck and celebration. The sudden shift in the attitude of an entire nation towards a chunk of itself had a lot to do with the book of appropriate behaviors and civilization that the British brought along to preach to the brown skinned.

Transgender in pakistan

 

It is also important to note here that the language which has found its dominance over the entire world has no personal pronoun for the third gender, where there is one for both the female and male gender. It is therefore entirely possible that the culture set out to promote civilization and liberalism, which is now the advocate for acceptance and rights of the trans community and which has singled out cultures like that of Pakistan for stigmatizing the third gender, is responsible for the strong taboos attached to it.

Transgenders in Pakistan

Which brings us to the issue of whether the transgender issue is actually an issue or a linguistic dictation. While the common belief is that the transgender crisis is a biological problem indicating that the natural existing state of an individual is believed to be ‘unnatural’, a disease, a condition, a problem. Also indicating that the health of a perfectly normal human being is put into doubt due to the presence or absence of certain sex organs that the vast majority expects to be a certain way. The indication to a problem suggests a solution, a solution to being transgender. Why is it that nobody has ever told a man that there was a solution to his ‘condition’ and who decided that the transgender ‘condition’ needed a solution or a distinction in terms of humanity? Why is it that while applying for your National Identity Card in Pakistan you have to present a medical certificate proving that you are transgender? Why is it that no other sex is put under this humiliation?

Transgenders in Pakistan

What is it which brews such mistrust for the trans in the ‘normal’? Is it not language? The language which invaded the subcontinent and plundered at its culture replacing it with a confused, complexed and a more extreme one at the brunt of which were the peacocks of India forced to doubt their beauty and strength. Caged in imperialist normalcy and thrown into dark alleys protecting the ‘natural’ order of the British society from getting contaminated.

While one cannot deny the presence of religious misunderstanding and deep rooted cultural sexism while discussing the transgender ‘problem’ one can absolutely not rule out the possibility that the problem stems out of the word problem itself suggesting that it is entirely the result of a hangover from a foreign language.

Ref : https://www.maatitv.com/transgender-a-biological-fault-or-a-linguistic-one/

Prime Minister’s Youth Training Scheme

Prime Minister’s Youth Training Scheme

Brief Description

Aimed at training the educated youth of Pakistan through internship in private and public sector offices.

Eligibility Criteria

  • 16 years HEC recognized degree or equivalent.
  • Diploma of 3 years after Matric / FSc.
  • Madrassah graduates are also entitled to apply.
  • 50% of marks or 2.5 CGPA in final degree/diploma is the minimum threshold for selection of interns.
  • Age limit is upto 25 years on 25-10-2016.
  • Pakistani National.
  • There is no gender discrimination female candidates will be encouraged to apply.

Geographical Spread

All over Pakistan

Stipend

Rs.12,000 per month for 12 months

Number of Interns

50,000

Training Programme

Focal points in each private and public office will be responsible for ensuring effective use of the internees’ services

Areas of Training

All leading private sector firms/bodies and development sector organizations, federal, provincial and local government offices including educational institutions will be offered services of the internees

Allocation of Interns

Primarily, the allocation of interns will be made in accordance with the NFC award and FPSC’s recruitment criteria for provincial/regional quotas for all three years. The selection of Interns will be as per their domicile but can be placed in origination outside of their domicile region based on the demand profile and matching of applicant profile. Per year allocation of interns is as under

  • Budget Allocation 2015-18: 7851 Million
  • Data cleansing of 106,989 applicants is complete, out of which almost 44000 degree holders have been verified by HEC and almost 18000 Diploma holders have been verified by the respective Technical Education Boards.
  • M/O IPC has issued placement letters to 44000 successful interns based on their preferences and matching market demand.  Out of these 44000 interns, 33000 are degree holders whereas 11000 are diploma holders.

تحفظ حقوق نسواں بل کا مکمل متن

muslimwomensrights_fa_rszd

قومی اسمبلی میں پیش کردہ صورت میں مجموعہ تعزیرات پاکستان، مجموعہ ضابطہ فوجداری اور دیگر قوانین میں مزید ترمیم کرنیکا بلچونکہ دستور کا آرٹیکل ١١٤ اس امر کو یقینی بناتا ہے کہ شرف انسانی اور قانونکے تابع، گھر کی خلوت قابل حرمت ہو گی۔
چونکہ دستور کا آرٹیکل ٣٧ سماجی انصاف کو فروغ دینے اور سماجی برائیوں کا خاتمہ کرنے کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔
چونکہ یہ ضروری ہے کہ قانون کے غلط اور بیجا استعمال کے خلاف خواتین کی داد رسی کی جائے اور تحفظ فراہم کیا جائے اور ان کے استحصال کو روکا جائے۔
چونکہ اس بل کا مقصد ایسا قانون لانا ہے جو بالخصوص دستور کے بیان کردہ مقاصد اور اسلامی احکام سے مطابقت رکھتا ہو۔
چونکہ یہ قرین مصلحت ہے کہ بعدازیں ظاہر ہونے والی اغراض کے لئےمجموعہ تعزیرات پاکستان ١٨٦٠ء (ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٦٠ء) مجموعہ ضابطہ فوجداری ١٨٩٨ء (ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٩٨ء) قانون انفساخ ازواج مسلمانان ١٩٣٩ء (نمبر ٨ بابت ١٩٣٩ء) زناء کا جرم (نفاذ حدود) آرڈیننس، ١٩٧٩ء (نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء) اور قذف کا جرم (حد کا نفاظ) آرڈیننس، ١٩٧٩ء (نمبر ٨ مجریہ ١٩٧٩ء) میں مزید ترمیم کی جائے۔
لہذا بذریعہ ہذا حسب ذیل قانون وضع کیا جاتا ہے۔١- مختصر عنوان اور آغاز کا نفاذ:-
(١) یہ ایکٹ، قانون فوجداری ترمیمی (خواتین کا تحفظ) ایکٹ ٢٠٠٢ء کے نام سے موسوم ہو گا۔
(٢) یہ فی الفور نافذالعمل ہو گا۔

٢۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعہ کی شمولیت:-
مجموعہ تعزیرات پاکستان (ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء) میں جس کا حوالہ بعدازیں ‘مجموعہ قانون‘ کے طور پر دیا گیا، دفعہ ٣٦٥ الف کے بعد، حسب ذیل نئی دفعہ شامل کر دی جائے گی یعنی ۔۔۔
٣٦٥ ب۔ عورت کو نکاح وغیرہ پر مجبور کرنے کے لئے اغوا کرنا لے بھاگنا یا ترغیب دینا:-
جو کوئی بھی کسی عورت کو اس اردادے سے کہ اسے مجبور کیا جائے، یا یہ جانتے ہوئے اسے مجبور کرنے کا احتمال ہے کہ وہ اپنی مرضی کے خلاف کسی شخص سے نکاح کرے یا اس غرض سے کہ ناجائز جماع پر مجبور کی جائے یا پھسلائی یا اس امر کے احتمال کے علم سے کہ اسے ناجائز جماع پر مجبور کر لیا جائے یا پھسلا لیا جائے گا، لے بھاگے یا اغوا کر لے تو عمر قید کی سزا دی جائے گی اور جرمانے کا بھی مستوجب ہو گا اور جو کوئی بھی اس مجموعہ قانون میں تعریف کردہ تخریف مجرمانہ کے ذریعے یا اکتیار کے بیجا استعمال یا جبر کے کسی دوسرے طریقے کے ذریعے، کسی عورت کو کسی جگہ سے جانے کے لئے اس ارادے سے یا یہ جانتے ہوئے ترغیب دے کہ اس امر کا احتمال ہے کہ اسے کسی دوسرے شخص کے ساتھ ناجائز جماع پر مجبور کیا جائے گا یا پھسلا لیا جائے گا تو بھی مذکورہ بالا طور پر قابل سزا ہو گا۔

٣۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعہ کی شمولیت:-
مذکورہ مجموعہ قانون میں دفعہ ٣٦٧ کے بعد حسب ذیل نئی دفعہ شامل کر دی جائے گی یعنی ۔۔۔۔۔
٣٦٧ الف ۔ کسی شخص سے غیر فطری خواہش نفسانی کا نشانہ بنانے کی غرض سے اغوا کرنا یا لے بھاگنا:-
جو کوئی بھی کسی شخص کو اس غرض سے کہ مذکورہ شخص کسی شخص کی غیر فطری خواہش نفسانی کا نشانہ بنایا جائے یا اس طرح ٹھکانے لگایا جائے کہ وہ کسی شخص کی غیر فطری خواہش نفسانی کا نشانہ بننے کے خطرے میں پڑ جائے اس امر کے احتمال کے علم کے ساتھ مذکورہ شخص کو بایں طور پر نشانہ بنایا جائے گا یا ٹھکانے لگایا جائے گا، لے بھاگے یا اغوا کرے تو اسے موت یا پچیس سال تک کی مدت کے لئے قید سخت کی سزا دی جائے گی اور وہ جرمانے کا بھی مستوجب ہو گا۔

٤۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعات کی شمولیت:-
مذکورہ مجموعہ قانون میں دفعہ ٣٧١ کے بعد حسب ذیل نئی دفعات شامل کر دی جائیں گی یعنی ۔۔۔۔۔
٣٧١ الف ۔ کسی شخص کو عصمت فروشی وغیرہ کی اغراض کے لئے فروخت کرنا:-
جو کوئی بھی کسی شخص کو اس نیت سے کہ مذکورہ شخص کسی بھی وقت عصمت فروشی یا کسی شخص کے ساتھ ناجائز جماع کی غرض سے یا کسی ناجائز اور غیر اخلاقی مقصد کے لئے کام میں لگایا جائے گا یا استعمال کیا جائے گا یا اس امر کے احتمال کا علم رکھتے ہوئے کہ مذکورہ شخص کو کسی بھی وقت مذکورہ غرض کے لئے کام میں لگایا جائے گا یا استعمال کیا جائے گا، فروخت کرے، اجرت پر چلائے یا بصورت دیگر حوالے کرے تو اسے پچپن سال تک کی مدت کے لئے سزا دی جائے گی اور وہ جرمانے کا بھی مستوجب ہو گا۔
تشریحات۔
(الف) جب کوئی عورت کسی طوائف یا کسی شخص کو کسی چکلے یا مالک یا منتظم ہو فروخت کی جائے، اجرت پر دی جائے، بصورت دیگر حوالے کی جائے تو مذکورہ عورت کو اس طرح حوالے کرنے والے شخص کے متعلق تاوقتیکہ اس کے برعکس ثابت نہ ہو جائے یہ تصور کیا جائے گا کہ اس نے اسے اس نیت سے حوالے کیا تھا کہ اسے عمت فروشی کے مقصد کے لئے استعمال کیا جائے گا۔
(ب) دفعہ ہذا اور دفعہ ٣٧١ ب کی اغراض کے لئے ‘ناجائز جماع‘ سے ایسے اشخاص کے مابین جماع مراد ہے جو رشتہ نکاح میں منسلک نہ ہوں۔
٣٧١ ب ۔ کسی شخص کو عصمت فروشی وغیرہ کی اغراض سے خریدنا:-
جو کوئی بھی کسی شخص کو اس نیت سے کہ مذکورہ شخص کو کسی وقت عصمت فروشی کے لئے یا کسی شخص کے ساتھ ناجائز جماع کے لئے کسی ناجائز اور غیر اخلاقی مقصد کے لئے کام میں لگایا جائے گا یا استعمال کیا جائے گا، خریدے، اجرت پر رکھے یا بصورت دیگر اس کا قبضہ حصل کرے تو اسے پچیس سال کی مدت کے لئے سزائے قید دی جائے گی اور جرمانے کا بھی مستوجب ہو گا۔
تشریح:-
کوئی طوائف یا کوئی شخص جو کسی چکلے کا مالک یا منتظم ہو کسی عورت کو خریدے، اجرت پر رکھے یا بصورت دیگر اس کا قبضہ حاصل کرے تو تاوقتیکہ اس کے برعکس ثابت نہ ہو جائے یہ تصور کیا جائے گا کہ اس عورت پر اس نیت سے قبضہ کیا گیا تھا کہ اسے عصمت فروشی کے مقصد کے لئے استعمال کیا جائے گا۔

٥۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعہ کی شمولیت:-
مذکورہ مجموعہ قانون میں دفعہ ٣٧٤ کے بعد ذیلی عنوان ‘زنا بالجبر‘ کے تحت حسب ذیل نئی دفعات شامل کر دی جائیں گی، یعنی ۔۔
٣٧٥۔ زنا بالجبر:-
کسی مرد کو زنا بالجبر کا مرتکب کہا جائے گا جو ماسوائے ان مقدمات کے جو بعدازاں مستثنٰی ہوں، کسی عورت کے ساتھ مندرجہ ذیل پانچ حالات میں میں سے کسی میں جماع کرے۔
(اول) اس کی مرضی کے خلاف۔
(دوم) اس کی رضا مندی کے بغیر۔
(سوم) اس کی رضا مندی سے، جبکہ رضا مندی اس کو ہلاک یا ضرر کا خوف دلا کر حاصل کی گئی ہو۔
(چہارم) اس کی مرضی سے جبکہ مرد جانتا ہو کہ وہ اس کے نکاح میں نہیں ہے اور یہ کہ رضا مندی کا اظہار اس وجہ سے کیا گیا ہے کیونکہ وہ یہ باور کرتی ہے کہ مرد وہ دوسرا شخص ہے جس کے ساتھ اس کا نکاح ہونا وہ باور کرتا ہے یا کرتی ہے، یا
(پنجم) اس کی رضا مندی سے یا اس کے بغیر جبکہ وہ سولہ سال سے کم عمر کی ہو۔
تشریح:-
زنا بالجبر کے جرم کے لئے مطلوبہ جماع کے تعین کے لئے دخول کافی ہے۔‘
٣٧٦۔ زناءبالجبر کے لئے سزا:-
(١) جو کوئی زناءبالجبر کا ارتکاب کرتا ہے اسے سزائے موت یا کسی ایک قسم کی سزائے قید جو کم سے کم پانچ سال یا زیادہ سے زیادہ پچیس سال تک ہو سکتی ہے دی جائے گی اور جرمانے کی سزا کا بھی مستوجب ہو گا۔
(٢) جب زناءبالجبر کا ارتکاب دو یا زیادہ اشخاص نے بہ تائید باہمی رضامندی سے کیا ہو تو، ان میں سے ہر ایک شخص کو سزائے موت یا عمر قید کی سزا دی جائے گی۔

٦۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعہ کی شمولیت:-
مذکورہ مجموعہ قانون میں، بابت بیس میں، حسب ذیل نئی دفعہ شامل کر دی جائے گی یعنی ۔۔
٤٩٣ الف۔ کسی شخص کا فریب سے جائز نکاح کا یقین دلا کر ہم بستری کرنا:-
ہر وہ شخص جو فریب سے کسی عورت کو جس سے جائز طریق پر اس نے نکاح نہ کیا ہو، یہ باور کرائے کہ اس نے اس عورت سے جائز طور پر نکاح کیا ہے اور اسے یقین کے ساتھ ہم بستری پر آمادہ کرے تو اسے پچیس سال تک کے لئے قید سخت دی جائے گی اور جرمانے کا بھی مستوجب ہو گا۔

٧۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعہ کی شمولیت:-
مذکورہ مجموعہ قانون میں دفعہ ٤٩٦ کے بعد، حسب ذیل نئی دفعہ شامل کر دی جائے گی، یعنی ۔۔
٤٩٦ الف۔ کسی عورت کو مجرمانہ نیت سے ورغلانہ یا نکال کر لے جانا یا روک رکھنا۔
جو کوئی بھی کسی عورت کو اس نیت سے نکال کر لے جائے یا ورغلا کر لے جائے کہ وہ کسی شخص کے ساتھ ناجائز جماع کرے یا کسی عورت کو مذکورہ نیت سے چھپائے یا روک رکھے تو اسے سات سال تک کی مدت کے لئے کسی بھی قسم کی سزائے قید دی جائے گی اور جرمانے کا بھی مستوجب ہو گا۔

٨۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعہ کی شمولیت:-
مذکورہ مجموعہ قانون میں، دفعہ ٥٠٢ الف کے بعد، حسب ذیل نئی دفعہ شامل کر دی جائے گی، یعنی ۔۔۔
٥٠٢ ب۔ زناءبالجبر کی صورت میں کسی عورت کی شناخت کی تشہیر کرنا:-
اگر کوئی زناءبالجبر کے کسی مقدمے کی تشہیر کرتا ہے جس کے ذریعے کسی عورت یا اس کے خاندان کے کسی فرد کی شناخت کو ظاہر کرے تو اسے چھ ماہ تک کی سزائے قید یا جرمانہ یا دونوں سزائیں دی جائیں گی۔

٩- ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٩٨ء میں نئی دفعات کی شمولیت:-
مجموعہ ضابطہ فوجداری ١٨٩٨ء (ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٩٨ء) میں دفعہ ٢٠٣ کے بعد، حسب ذیل نئی دفعات شامل کر دی جائیں گی، یعنی ۔۔۔
٢٠٣ الف ۔ زناء کی صورت میں نالش:-
(١) کوئی عدالت زناء کے جرم (نفاظ حدود) آرڈیننس، ١٩٧٩ء (نمبر مجریہ ١٩٧٩ء) کی دفعہ ٥ کے تحت کسی جرم کی سماعت نہیں کرے گی ماسوائے اس نالش کے جو کسی اختیار سماعت رکھنے والی مجاز عدالت میں دائر کی جائے۔
(٢) کسی نالش جرم کا اختیار سماعت رکھنے والی عدالت کا افسر صدارت کنندہ فوری طور پر مستغیث زناء کے فعل کے کم از کم چار چشم دید بالغ گواہوں کی حلف پر جرم کے لئے ضروری جانچ پڑتال کرے گا۔
(٣) مستغیث اور عینی گواہوں کی جانچ پڑتال کرنے کے لئے مواد کو تحریر تک محدود کر دیا جائے گا اور اس پر مستغیث اور عینی گواہوں کے علاوہ عدالت کے افسر صدارت کنندہ کے بھی دستخط ہوں گے۔
(٤) اگر عدالت کے افسر صدارت کنندہ کی یہ رائے ہو کہ کاروائی کے لئے کافی وجہ موجود ہے تو عدالت ملزم کی اصالتاَََََََ حاضری کے لئے سمن جاری کرے گا۔
(٥) کسی عدالت کا افسر صدارت کنندہ جس کے روپرو نالش دائر کی گئی ہو یا جس کو یہ منتقل کی گئی ہو اگر وہ مستغیث اور چار یا زائد عینی گواہوں کے حلفیہ بیانات کے بعد یہ فیصلہ دے کہ کاروائی کے لئے کافی وجہ موجود نہیں ہے، نالش کو خارج کر سکے گا اور ایسی صورت میں وہ اس کی وجوہات قلمبند کرے گا۔
٢٠٣ ب قذف کی صورت میں نالش:-
(١) دفعہ ٦ کی ذیلی دفعہ (٢) کے تابع، کوئی عدالت قذف کا جرم (نفاظ حد) آرڈیننس ١٩٧٩ء (نمبر ٨ مجریہ ١٩٧٩ء) کی ذیلی دفعہ ٧ کے تحت کسی جرم کی سماعت نہیں کرے گی ماسوائے اس نالش کے جو اختیار سماعت رکھنے والی مجاز عدالت میں دائر کی جائے۔
(٢) کسی نالش جرم کا اختیار سماعت رکھنے والی عدالت کا افسر صدارت کنندہ فوری طور پر مستغیث کی قذف کے فعل کے جرم میں ضروری جانچ پڑتال کرے گا۔
(٣) مستغیث کی جانچ پڑتال کے مواد کو تحریر تک محدود کر دیا جائیگا اور اس پر مستغیث کے علاوہ افسر صدارت کنندہ کے بھی دستخط ہوں گے۔
(٤) اگر عدالت کے افسر صدارت کنندہ کی یہ رائے ہو کہ کاروائی کے لئے کافی وجہ موجود ہے تو عدالت ملزم کی اصالتاَََََََ حاضری کے لئے سمن جاری کرے گا۔
(٥) کسی عدالت کا افسر صدارت کنندہ جس کے روپرو نالش دائر کی گئی ہو یا جس کو یہ منتقل کی گئی ہو اگر وہ مستغیث کے حلفیہ بیانات پر غور کرنے کے بعد یہ فیصلہ دے کہ کاروائی کے لئے کافی وجہ موجود نہیں ہے،تو نالش کو خارج کر سکے گا اور ایسی صورت میں وہ اس کی وجوہات قلمبند کرے گا۔

١٠۔ ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٩٨ء کے جدول دوم کی ترمیم:-
مجموعہ ضابطہ فوجداری ١٨٩٨ء (ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٩٨ء) میں دول دوم میں ۔۔۔

١١۔ آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء کی نئی دفعہ ٢ کی ترمیم:-
(١) زناء کے جرم (نفاظ حدود) آرڈیننس ١٩٧٩ء (آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء) میں دفعہ ٢ میں شقات (ج) اور (ہ) حذف کر دی جائیں گی۔

١٢۔ آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء کی دفعہ ٣ کا حذف:-
زناء کا جرم (نفاظ حدود) آرڈیننس، ١٩٧٩ء (آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء) کی دفعہ ٣ کو حذف کر دیا جائیگا۔

١٣۔ آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء کی دفعہ ٤ کی ترمیم:-
زناء کا جرم (نفاظ حدود) آرڈیننس ١٩٧٩ء (آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء میں دفعہ ٤ میں لفظ ‘جائز طور پر‘ اور مذکورہ دفعہ کے آخر میں تشریح کو حذف کر دیا جائیگا۔

١٤۔ آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء کی دفعات ٦ اور ٧ کا حذف کرنا:-
زناء کا جرم (نفاظ حدود) آرڈیننس ١٩٧٩ء (آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء) کی دفعات ٦ اور ٧ کو حذف کر دیا جائے گا۔

بیان اغراض و وجوہ۔
اسلامی جمہوریہ پاکستان کے مسملہ دستوری مقاصد میں سے ایک یہ ہے کہ مسلمانوں کو اسلامی تعلیمات اور مقتضیات کے مطابق جیسا کہ قرآن پاک اور سنت میں موجود ہے۔ بحثیت انفرادی اور اجتماعی زندگیاں گزارنے کے قابل بنایا جائے۔
چنانچہ دستور، اس امر کی تاکید کرتا ہے کہ موجودہ تمام قوانین کو اسلامی احکام کے مطابق جس طرح قرآن پاک اور سنت میں ان کا تعین کیا گیا ہے، دینا چاہیے۔
اس بل کا مقصد بالخصوص زناء اور قذف سے متعلق قوانین کو بالخصوص بیان کردہ اسلامی جمہوری پاکستان کے مقاصد اور دستوری ہدایت کے مطابق بنانا ہے اور خاص طور پر قانون کے بے جا اور غلط استعمال کے خلاف خواتین کی داد رسی کرنا اور انہیں تحفظ فراہم کرنا ہے۔
قرآن پاک میں زناء اور قذف کے جرائم کے بارے میں موجود ہے زناء اور قذف سے متعلق دو آرڈیننس اس اس حقیقت کے باوجود کہ قرآن اور سنت نے نہ تو ان جرائم کی وضاعت کی ہے اور نہ ہی ان کے لئے سزا مقرر کی ہے تاہم دیگر قابل سزا قوانین کے شمار میں اضافہ کرتے ہیں، زناء اور قذف کے لئے سزائیں قصاص کے کسی اصول کے بغیر یا ان جرائم کے لئے ثبوت کے کسی طریقے کی نشاندہی کئے بغیر نہیں دی جا سکتیں۔
کوئی جرم جس کا حوالہ قرآن پاک اور سنت میں نہیں یا جس کے لئے اس میں سزا کے بارے میں نہیں بتایا گیا وہ تعزیر ہے جو ریاستی قانون سازی کا موضوع ہے۔ یہ دونوں کام ریاست کے ہیں کہ وہ مذکورہ جرائم کی وضاعت کرے اور ان کے لئے سزاؤں کا تعین کرے۔ ریاست مذکورہ اختیار کو مکمل اسلامی ہم آہنگی کے ذریعے استعمال کرتی ہے جو ریاست کو وضاعت اور سزا ہر دو کا اختیار دیتا ہے، اگرچہ ، مذکورہ تمام جرائم کو دونوں حدود آرڈیننسوں سے نکال دیا گیا ہے اور مجموعہ تعزیرات پاکستان ١٨٦٠ء (ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء) جسے بعدازاں پی پی سی کا نام دیا گیا ہے میں مناسب طور پر شامل کر دیا گیا ہے۔
زناء کے جرم (نفاظ حد) آرڈیننس ١٩٧٩ء (نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء) جسے بعدازاں ‘زناء آرڈیننس‘ کا نام دیا گیا ہے کی دفعات ١١ تا ١٦ میں دیئے گئے جرائم تعزیر کے جرائم میں ہیں، ان تمام کو مجموعہ تعزیرات پاکستان ١٨٦٠ء (ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء) کی دفعات ٣٦٥ب، ٣٦٧الف، ٣٧١الف، ٣٧١ب، ٤٩٣الف اور ٤٩٦الف کے طور پر شامل کیا گیا ہے۔ جرم قذف (نفاظ حد) آرڈیننس ١٩٧٩ء جسے بعدازاں ‘قذف آرڈیننس‘ کا نام دیا گیا ہے کی دفعات ١٢ اور ١٣ کو حذف کیا گیا ہے، یہ مذکورہ آرڈیننس کی دفعہ ٣ میں قذف کی تعریف کے طور پر کیا گیا ہے جو طبع شدہ اور کنندہ شدہ مواد کی طباعت یا کنندہ کاری یا فروخت کے ذریعے ارتکاب کردہ قذف کو کافی تحفظ دیتی ہے۔ مذکورہ تعزیری جرائم میں سے کسی کی آئینی تعریف کے استعمال میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی ہے یا ان کے لئے مقرر کی گئی سزا کو محفوظ رکھا گیا ہے۔ ان تعزیری جرائم کے لئے کوڑوں کی سزا کو حذف کیا گیا ہے جیسا کہ قرآن اور سنت میں ان جرائم سے متعلق کوئی سزا نہیں ہے۔ ریاست کو یہ اختیار ہے کہ وہ اسلام کے منصفانہ نظریئے کے مطابق اس میں تبدیلی لائے۔ یہ پی پی سی کے مطابق اور شائشتگی کے معئار کو قائم کرنے کے لئے ہے جس سے معاشرے کی کامل ترقی کی نشاندہی ہوتی ہے۔ زناء اور قذف کے آرڈیننس پر شہریوں کی طرف سے بالعموم اور اسلامی اسکالروں اور خواتین کی طرف سے بالخصوص سخت تنقید کی گئی۔ تنقید کے کئی موضوع تھے، ان میں زناء کے جرم کو زناء بالجبر (عصمت دری) کے ساتھ ملانا شامل ہے۔ اور دونوں کے لئے ثبوت اورسزا کی ایک ہی قسم رکھی گئی ہے۔ یہ بے جا سہولت دیتا ہے کوئی عورت جو عصمت دری کو ثابت نہیں کر سکتی اس پر اکثر زناء کا استغاثہ دائر کر دیا جاتا ہے، زناء بالجبر (عصمت دری) کے لئے زیادہ سے زیادہ سزا کے ثبوت کی ضرورت صرف اتنی ہے جتنی کہ زناء کے لئے ہے۔ یہ اول الذکر کو ثابت کرنے کے لئے تقریبا ناممکن بنا دیتا ہے۔
جب کسی مرد کے خلاف عصمت دری کے استغاثہ میں ناکامی ہو لیکن طبی معائنے سے جماع یا حمل کی یا بصورت دیگر تصدیق ہو جائے تو عورت کو چار عینی گواہوں کے نہ ہونے سے زناء کی سزا حد کے طور پر نہیں دی جاتی بلکہ تعزیر کے طور پر دی جاتی ہے، اس شکایت کو بعض اوقات اعتراف تصور کیا جاتا ہے۔
قرآن اور سنت زناء کے لئے تعزیری سزا کے مقتنی نہیں ہیں۔ یہ آرڈیننس کا مسودہ تیار کرنے والوں کے ذاتی خیالات پر مبنی ہے اور قذف کے جرائم کے لئے تعزیری سزائیں نہ صرف اسلامی اصولوں کے منافی ہیں بلکہ استحصال اور نا انصافی کو جنم دیتی ہیں، انہیں ختم کیا جا رہا ہے۔ دستوری تعزیرات کو واضح اور غیر مبہم ہونا چاہیے، ممنوعہ اور غیر ممنوعہ کے درمیان واضح حد مقرر ہو۔ شہری اس سے آگاہ ہوں، وہ اپنی زندگی اور طور طریقوں کو ان روشن رہنما اصولوں کو اپناتے گزار سکیں لہذا ان میں وہ اور متعلقہ قوانین مین غیر واضح تعریفات کی وضاعت کی جا رہی ہے اور جہاں یہ ممکن نہیں ہے انہیں حذف کیا جا رہا ہے۔ اس کا مقصد صرف یہ ہے کہ غیر محتاط شہریوں کو تعزیری قوانین کے غیر دانشمندانہ استعمال سے تحفظ بہم پہنچایا جائے۔ زناء آرڈیننس ‘نکاح‘ کی جائز نکاح کے طور پر تعریف کرتا ہے، بالخصوص دیہی علاقوں میں نکاح بالعموم اور طلاق کو بالخصوص رجسٹر نہیں کیا جاتا۔ کسی شخص پر زناء کا الزام لگانے کے لئے دفاع میں ‘جائز نکاح‘ کا تعین مشکل ہو جاتا ہے۔ رجسٹریشن نہ کرانا اس کے دیوانی منطقی نتائج میں صرف یہی کافی ہے کوئی نکاح رجسٹر نہ کرایا جائے یا کسی طلاق کی تصدیق کو تعزیری منطقی نتائج سے مشروط نہ کیا جائے۔ اس میں اسلامی ہم آہنگی پائی جاتی ہے۔ جب کسی جرم کے ارتکاب میں کوئی شبہ پایا جائے تو حد کو نافذ نہ کیا جائے، قانون مذکورہ مقدمات میں غلط استعمال کی وجہ سے سابقہ خاوندوں اور معاشرے کے دیگر ارکان کے ہاتھوں میں ظلم و ستم کا کھلونا بن گیا ہے۔
تین طلاقیں دیئے جانے کے بعد عورت اپنے میکے چلی جاتی ہے وہ دوران عدت جاتی ہے، کچھ ہی دنوں کے بعد خاندان کے لوگ نئے ناطے کا انتظام کر دیتے ہیں اور وہ شادی کر لیتی ہے، اس وقت خاوند یہ دعوٰی کرتا ہے کہ یئت ہائے مجاز کی طرف سے طلاق کی تصدیق کے بغیر نکاح ختم نہیں ہوا اور زناء کا مقدمہ دائر کر دیتا ہے یہ ضروری ہے کہ اسے ختم کرنے کے لئے اس تعریف کو حذف کر دیا جائے۔
زناء بالجبر (عصمت دری) کے جرم کے لئے کوئی حد موجود نہیں ہے، یہ تعزیری جرم ہے، لہذا عصمت دری کی تعریف اور سزا کو پی پی سی میں بالترتیب دفعات ٣٧٥ اور ٣٧٦ میں شامل کیا جا رہا ہے۔ جنس کی مبہم تریف میں ترمیم کی جا رہی ہے تاکہ یہ واضح کیا جا سکے کہ عصمت دری ایک جرم ہے جس کا ارتکاب مرد عورت کے ساتھ کرتا ہے۔ عصمت دری کا الزام لگانے کے لئے عورت کی مرضی دفاع کے طور پر استعمال کی جاتی ہے۔ یہ انتظام کیا جا رہا ہے کہ اگر عورت کی عمر ١٦ سال سے کم ہو تو مذکورہ مرضی کو دفاع کے طور پر استعمال نہ کیا جائے یہ کمزور کو تحفظ دینے کی ضرورت ہے، جس کی قرآن بار بار تاکید کرتا ہے اور بین الاقوامی قانونی ذمہ داری کے اصولوں میں ہم آہنگی پیدا کرتا ہے۔
اجتماعی زیادتی کی سزا موت ہے۔ اس سے کم سزا نہیں رکھی گئی ایسے مقدمات کی سماعت کرنے والی عدالتوں کا یہ مشاہدہ ہے کہ بعض حالات میں ان کی یہ رائے ہوتی ہے کہ کسی شخص کو بری نہیں کیا جا سکتا جبکہ عین اس وقت مقدمت کے حقائق اور حالات کے مطابق سزائے موت جائز نہیں ہوتی نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ مذکورہ مقدمات میں ملزم کو بری کرنے پر مجبور ہوتے ہیںاس معاملے کو نمٹانے کے لئے سزائے موت کے متبادل کے طور پر عمر قید کی سزا کا اضافہ کیا جا رہا ہے۔
تعزیر زناء بالجبر (عصمت دری) اور اجتماعی زیادتی کی قانونی کاروائی کے لئے طریقہ کار، اس طرح دیگر تمام تعزیرات، پی پی سی کے تحت تمام جرائم کو مجموعہ ضابطہ فوجداری ١٨٩٨ء (ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٩٨ء) بعدازیں ‘سی آر پی سی‘ کے ذریعے منضبط کیا گیا ہے۔
لعان انفساخ نکاح کی شکل ہے کوئی عورت جو کہ اپنے شوہر کی طرف سے بدکاری کی ملزمہ ہو اور اس الزام سے انکاری ہو اپنی ازواجی زندگی سے علیحدگی کا مطالبہ کر سکتی ہے۔ لعان سے متعلق قذف آرڈیننس کی دفعہ ١٤ اس کے لئے طریقہ کار فراہم کرتی ہے۔ انفساخ نکاح کی آئینی تعزیر میں کوئی جگہ نہیں ہے۔ اسی طرح، قانون انفساخ ازواج مسلمانان، ١٩٣٩ء (نمبر٨ بابت ١٩٣٨ء) کے تحت لعان کو طلاق کی وجہ کے طور پر متعارف کرایا گیا ہے۔
زناء اور قذف کی تعریف ویسی ہی رہے گی جیسا کہ زناء اور قذف آرڈیننسوں میں ہے۔ نیز زناء اور قذف دونوں کے لئے سزائیں ایک جیسی ہی ہوں گی۔
زناء سگین جرم ہے جو کہ لوگوں کو اخلاق کو بگاڑتا ہے اور پاکدامنی کے احساس کو تباہ کرتا ہے۔ قرآن زناء کو لوگوں کے اخلاق کے برعکس ایک جرم ٹھہراتا ہے۔ چار چسم دید گواہوں کی ضرورت بلا شرکت غیرے صریحاً غیر معمولی بار نہیں ہے۔ یہ بھی دعوٰٰی ہے کہ اگر حدیث کے برعکس ہو، ‘اللہ ان لوگوں کو پسند نہیں کرتا جو اپنے گناہوں کو چھپاتے ہیں‘ جو کسی عمل کا ارتکاب اس طرح غل غپاڑہ کی صورت میں کرتے ہیں تاکہ طار آدمی اس کو دیکھ لیں، البتہ معاشرے کو بہت سنگین نقصان ہو گا۔ اسی وقت قرآن راز داری کو تحفظ دیتا ہے، بت بنیاد اندازوں سے روکتا ہے اور تحقیقات کرنے اور دوسروں کی زندگی میں دخل اندازی سے منع کرتا ہے۔ اس لئے زناء کے ثبوت کی ناکامی کی وجوہ کی بنا پر قذف کے لئے سزا عائد ہو جاتی ہے (زناء کے متعلق جھوٹا الزام) قرآن شکایت کنندہ سے زناء کو ثابت کرنے کے لئے چار چشم دید گواہ مانگتا ہے۔ شکایت کنندہ اور شہادت دینے والوں کو اس جرم کی سنگینی سے بخوبی آگاہی ہونی چاہئے کہ اگر انہوں نے جھوٹا الزام لگایا یا الزام کے شک کو دور نہ کر سکے تو وہ قذف کے لئے سزا وار ہوں گے۔ ملزم زناء کی قانونی کاروائی میں ناکامی کے نتیجے میں دوبارہ از سر نو قانونی کاروائی شروع نہیں کرے گا۔
زناء آرڈیننس خواتین پر استغاثہ کا بے جا استعمال کرتا ہے، خاندانی تنازعات کو طے کرنے اور بنیادی انسانی حقوق اور بنیادی آزادیوں سے انحراف کرتا ہے۔ زناء اور قذف کے ہر دو مقدمات میں اس کے بے جا استعمال پر نظر رکھنے کے لئے مجموعہ ضابطہ فوجداری میں ترمیم کی جا رہی ہے تاکہ صرف سیشن عدالت ہی کسی درخواست پر مذکورہ مقدمات میں سماعت کا اختیار استعمال کر سکے۔ اسے قابل ضمانت جرم قرار دیا گیا ہے تاکہ ملزم دوران سماعت جیل میں یاسیت کا شکار نہ رہے۔ پولیس کو کوئی اختیار نہیں ہو گا کہ وہ مذکورہ مقدمات میں کسی کو گرفتار کر سکے تاوقتیکہ سیشن عدالت اس کی اجازت نہ دے اور مذکورہ ہدایات ماسوائے عدالت میں حاضری کو یقینی بنائے جانے یا کسی سزا دہی کی صورت کے جاری نہیں کی جا سکتیں، مجموعہ تعزیرات کی صورت میں، عورت یا اس کے خاندان کے کسی فرد کی تشہیر نہیں ہو گی اور اس کی خلاف ورزی کی صورت میں چھ ماہ تک کی سزائے قید یا جرمانہ یا دونوں سزائیں دی جائیں گی۔
مذکورہ تمام ترامیم کا بنیادی مقصد زناء اور قذف کو اسلامی احکام کے مطابق قابل سزا بنانا ہے۔ جیسا کہ قرآن اور سنت میں دیا گیا ہے۔ استحصال سے روکنا، پولیس کے بے جا اختیارات سے روکنا اور انصاف اور مساویانہ حقوق پر مبنی معاشرے کو تشکیل دیتا ہے۔

پلان ایکس نے خواتین کو بااختیار بنانے کے پروگرام کا آغاز کر دیا

 

women-empowerment-is-not-a-privilege-it-s-a-right-1457186860-4905

پنجاب انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ نے پلان ایکس کے تعاون سے خواتین کی کاروباری سرگرمیوں میں معاونت اور انکی تربیت کے لئے پروگرام کا آغاز کر دیا ہے۔ اس پروگرام کا بنیادی مقصد خواتین کو قومی ترقیاتی دھارے میں لانا اور انہیں کاروباری سرگرمیوں کے تیار کرنا اور انکی حوصلہ افزائی کرنا ہے۔ اس مقصد کے لئے خواتین کی استعداد کار میں اضافے کے لئے تربیت اور معاونت فراہم کی جائیگی۔ اب جبکہ پلان ایکس کا آغاز ہوئے دو برس گزر چکے ہیں تو اس تربیتی پروگرام میں صرف چار فیصد کمپنیاں ایسی تھیں جنہیں خواتین چلا رہی تھیں۔ پاکستان جہاں کی مجموعی آبادی میں خواتین کو اکثریت حاصل ہے ان اعدادوشمار کو کسی طرح بھی حوصلہ افزا قرار نہیں دیا جا سکتا، جبکہ ملک کی مجموعی لیبر فورس میں خواتین کی شرکت کا تناسب 28 فیصد ہے۔

پلان ایکس کی اس کاوش کا ایک اور مقصد اینٹرپینوئرشپ کے منظرنامے پر خواتین کی کاشوں کا اجاگر کرنا بھی ہے۔ اس حوالے سے پلان ایکس کی جانب سے گزشتہ دنوں جاری کی جانیوالی ایک پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ ملک میں انٹر پنیوئرشپ اور جدت کے تناظر میں خواتین کی شرکت کو یقینی بنانے اور ان کی تخلیقی صلاحیتوں کو اجاگر کرنے کے لئے پلان ایکس نے پاور وویمن انشیٹو کا آغاز کیا ہے۔

اس پروگرام کے تحت ملک کی صف اول کی یونیورسٹیوں میں زیر تعلیم خواتین کو تربیت، اکیڈمک پارٹنرشپ کے لئے منتخب کیا جائیگا تاکہ خواتین طالبات کو انٹرپینوئرشپ کی جانب نہ صرف راغب کیا جا سکے بلکہ ملک کی مجموعی ورک فورس میں ان کی شمولیت کی حوصلہ افزائی کی جا سکے۔ اس مقصد کے حصول کے لئے پلان ایکس کی ٹیم مختلف یونیورسٹیوں میں سیمنارز کا انعقاد کریگی جس میں خاص طور پر خواتین کے ایسے پروگرامز میں شرکت کے لئے حوصلہ افزائی کی جائیگی۔

اس کے ساتھ ساتھ پلان ایکس خواتین کی جانب سے بنائی جانیوالی کمپنیوں کو اپنے ایکسیلیٹر پروگرام میں شامل کریگا جس کے تحت ان خواتین کی جانب سے بنائی گئی نئی کمپنیوں کو تین ماہ کی بنیادی تربیت فراہم کی جائیگی۔ یہ کمپنیاں بعد ازاں پلان ایکس ایکسسلریشن پروگرام کے لئے درخواستیں بھی دینے کی اہل ہونگی جس کے تحت انہیں پلان ایکس میں مزید چھ ماہ کی تربیت اور تمام تر سہولیات فراہم کی جائیں گی۔

پاور وویمن پروگرام کے لانچ پر پلان ایکس کی ڈائریکٹر حٖفضہ شورش کا کہنا تھا کہ پلان ایکس میں بطور ٹیم یہاں صنفی توازن موجود ہے اور مرد و خواتین کو کام کرنے کے لئے صحت مندانہ ماحول دستیاب ہے اور اس پروگرام کے تحت ہم خواتین کی شمولیت کی حوصلہ افزائی کرینگے۔

حالیہ برسوں میں پاکستان میں خواتین انٹرپینئورشپ نے اتار چڑھاؤ کے باوجود ترقی کی ہے۔ حالیہ برسوں کے دوران بخش فاؤنڈیشن کی شریک بانی فائزہ فرحان کو معروف جریدے فوربز کی انڈر تھرٹی سوشل انٹرپینئوئرز کی فہرست میں شامل کیا گیا اسی طرح گزشتہ برس ملالہ فنڈ کی شریک بانی شازیہ شاہد اور سگھڑ کی بانی خالدہ بروہی کو اسی فہرست میں شامل کیا گیا تھا۔

اسی طرح سال رواں میں ایک بزنس کانفرنس کے موقع پر پاکستان اور امریکہ نے ایک مشترکہ ایکشن پلان پر دستخط کئے تھے جس کے تحت خواتین انٹرپینوئرشپ کی حوصلہ افزائی کی جائے گی تاکہ انہیں معاشی خود انحصار یمیسر آ سکے۔

Sound Laws for Unsound Minds

ALTHOUGH mental illness may be as debilitating as, or worse than, any physical ailment, it is not visible to the eye. Later this week, when Imdad Ali walks to the gallows, the world will see his body being punished but not his paranoid schizophrenic mind or the delusions, hallucinations and perceptual disturbances that impaired his judgement.

Whilst it is Imdad Ali’s tragedy that the Supreme Court preferred not to exercise leniency and delay his execution, it is a greater misfortune for the country that mental health issues remain as misunderstood and underexplored, by medical and legal professionals alike, as they are pervasive.

Imdad Ali’s particular legal history is both complicated and sad. In 2002, a court in Multan sentenced him to death for murdering a religious teacher. In 2008, the Lahore High Court and then in 2015, the SC rejected his appeals. Earlier this year, he filed a mercy petition before the president, which was also rejected. Then his wife filed a petition before the high court to have his execution delayed, however, this too was dismissed. The present order has been passed in her appeal to the SC.

At each step in the proceedings, Ali and then his wife pleaded his insanity, first as a defence and then as a ground for delay of execution. In terms of Section 464 of the Criminal Procedure Code, if on consideration of the evidence of an independent medical examiner, the trial court had formed the view that Ali was of unsound mind — ie his judgement was sufficiently impaired to prevent him from understanding the nature or legal implications of his act — then under Section 84 of the Penal Code he could not have been held liable for murder. At each step, however, the courts formed and affirmed the view that despite his illness, Ali was not entitled to take this plea.

The fact that Ali had been independently examined, found to be suffering from paranoid schizophrenia and still not considered a lunatic for the purposes of the law, or committed to a hospital for treatment before he could be tried, speaks volumes for the legal attitude towards mental illness in Pakistan.

The SC’s present order is no exception to this general trend. It states that schizophrenia is “not a permanent mental disorder, rather imbalance increasing or decreasing depending level of stress. It is a recoverable disease … which … does not fall within the definition of mental disorder….”

The court’s dismissive attitude is further evident from the fact that in arriving at this conclusion, it refers to the definition of ‘mental disorder’ in a defunct Mental Health Ordinance 2001 and interprets it in light of definitions in English rather than medical dictionaries and 1977, 1988 decisions of the Supreme Court of India, rather than recent decisions of more medically advanced jurisdictions.

It may be argued that the court’s somewhat cursory treatment of schizophrenia is due to successive courts having already addressed this issue. However, it is also indicative of the inadequate, outdated and fragmented state of mental health laws in Pakistan, which prevents the legal system from developing a meaningful understanding of underlying issues.

Whilst the joint efforts of Pakistani psychiatrists to update the Lunacy Act 1912 had led to the promulgation of the Mental Health Ordinance 2001, the law was rarely invoked. After the 2010 18th Amendment, responsibility for mental health devolved upon the provinces. However, presently only Sindh and Punjab have enacted mental health laws.

Unfortunately, even this weak legal framework has not been implemented. Presently, Pakistan has no recognised authority either for ensuring the welfare of patients or addressing the concerns of psychiatrists, even in an emergency.

Government facilities for mental patients are limited at best. The large number of private in-patient facilities are not registered with any authority and, therefore, unaccountable for the quality of their performance. Consequently, not only does the care of patients remain the responsibility of their relatives but they are also vulnerable to abuse at the hands of charlatans.

Given the situation, it falls to the courts to devise guidelines to balance the need to protect a person who is innocent but unfit to defend himself due to unsoundness of mind, and the need to protect the public from a person who has committed an act which would be a crime if it had been done with the requisite intention.

The UK Mental Health Act 1983 provides a precedent for striking such a balance. In terms of this law, if the sanity of an accused is questioned in any proceedings, he may be remanded to a hospital for evaluation or treatment and the trial may only proceed once he has recovered. Only in more serious mental health cases, does the question of fitness to defend arise.

The Court of Appeal of England & Wales has also laid down guidelines in R. v Bird (1990) for cases in which it becomes necessary for the court to sentence a mentally disordered person. It stipulated that in arriving upon a decision in this regard, courts should consider whether the offender is sufficiently dangerous and culpable to a degree that merits a custodial sentence or whether it may be more appropriate to commit him to a hospital for treatment along with a community sentence.

Disappointing as the SC’s assessment of paranoid schizophrenia and its inability to consider Imdad Ali’s welfare along with his culpability may be, the greater danger lies in the fact that courts subordinate to the SC may rely upon this judgement as a precedent in determining other similar cases.

This merely increases the responsibility of the judiciary to address future cases involving the mentally ill with greater sensitivity and to devise legal tests for determining their liability under criminal as well as civil laws, so that guilty or not, the mentally ill may be treated with the dignity and compassion that is their legal and human right.

Ref : http://www.dawn.com/news/1293240

Child marriage is a misinterpreted and cruel practice that reeks of ignorance

She shut the book and jumped around with blissful glee. Cinderella was her favourite character and she had gotten married too.

Mother had given her the news only yesterday. On her next birthday, she would be a bride, just like Cinderella. Cinderella’s wedding dress was white and puffy with beautiful flowers sown on it. So would be hers. Cinderella’s dainty shoes sparkled brightly. So will hers. Hundreds of people in fancy dresses attended Cinderella’s wedding. Her own wedding was to be attended by almost the entire village too. Food and drink will flow and everyone would look upon her as she will enter in her sparkling gown. Just like it happened in Cinderella!

The only difference is, Cinderella was not made a bride when she was 12. But for girls between the ages of 12 and 17 in Egypt, it is a frequented practice. Hence, the above described account depicts the true mind-set of each child bride that ties the knot in Egypt. Years have not yet touched their innocent dispositions. Their faculties are pure, their hearts bright and their sensibilities are not yet open to vulnerable exposure. In short, they are only children being tied together in marriages that are too big for their breeches. Such is the example of the 12-year-old Omar and the 11-year-old Gharam who were engaged in a lavish ceremony near Cairo.

Before questions are raised regarding the age of marriage envisaged by Islam and how puberty is put forth as a reasonable pretext for marriages, let us make a few things crystal clear. Islam has favoured early marriages in order to save the collective society from illicit relations, adultery and many such vices. But it has favoured ‘early’ marriages. Not ‘child’ marriages. Before someone starts giving examples of young marriages from different eras of Islamic history, let us also take a moment to ponder how drastically different were the ethos of those societies. Those were eras of precocious children who were capable of handling the affairs of not only their households, but of the entire state and empire that they were entrusted with.

Not only Muslim history, but European history also holds examples of rulers like Julius Caesar who was extremely young (by today’s standards) to take up the reins of the entire Roman Empire. But as man has evolved, so have his standards, his ethics and his values. While the behavioural sciences have advanced in theories on how to bring up children, they have also made our children more dependent. Technology and gadgets haven’t helped either. By spoon-feeding our children, we have raised a generation that is not mature enough to support or even survive early marriages, let alone the custom of child marriages prevalent in Egypt and other countries.

These marriages represent a culture of societal pressure and control that attempts to pre-empt and counter any decision making process on part of the bride and the groom. As even in the 21st century, ‘love’ marriages remain taboo for conservative societies, parents in such situations feel that they will encounter less resistance if they marry off their children while they are immature and impressionable. Some like Omar’s father in this case argue that,

“We have to protect them in their early years before they reach the age of deviation.”

Is it the only way to do so? No one denies the importance of raising kids according to certain moral standards. But is it wise to hand them such humongous responsibilities? Childhood being the most endearing and precious time of a person’s life, being deprived of it by marrying them and burdening them with obligations is sheer cruelty. What makes it even crueller is the fact that at this stage, due to their innocence and naivete, they do not realise what a marriage could bring at this time. Consummating their marriage and having their own children, while they are still pre-teens, becomes an ethical nightmare.

How can they be wise parents if they themselves are immature and inexperienced in life, not to mention their education is disrupted? Barbie dolls are replaced with crying infants being nursed by little girls who are physically fragile and mentally juvenile. But it would be unfair to say that only girls feel the brunt of this antiquated and brutal practice. Boys are affected adversely too. They become mentally stressed out from the responsibilities thrust upon them and the premature flair for physical intimacy drives them towards unhealthy and illicit activities.

Islam teaches us certain guidelines for conducting our affairs, but it also invites us towards Ijma and Qiyas, which are tools of intellectual cognition and derivations. Thus, there is a need for proper research regarding these matters in light of religion and circumstances to guide the normal public as to when and how marriages be conducted in an Islamic society.

By our orthodox beliefs, we have made our lives more difficult by brandishing the so-called iron fist of Islam at anyone who dares to question our practices. Child marriage is a misinterpreted and cruel practice that reeks of ignorance. It must be eradicated because every child has the right towards a robust childhood before he or she becomes burdened with the affairs of adulthood. Let your children, be children first and then parents, when the right time