Gender Disparities In Pakistan: Unmasking The Democratic Delusion

women-pakistan

Recognition of womens’ dignity, health, education, work, and political inclusion are some of the prerequisite actions for gender equality, however, despite of such acceptance, women either at work or domestic life face mental, physical and emotional harassment by working colleagues, life partners and blood relations. Even the worst is that all this shameful is conceived and dealt as normal routine of life a personal, family or tribal matter.

Tackling all these humiliations and out dated norms, being best fascinating part of democracy, gender equality not only ensures the survival & dignity of women, perhaps it also adheres all the women rights as human rights & towards the attainment of gender justice, nations of the world came up with the Elimination All forms of Discrimination against Women (CEDAW) & indeed, Pakistan is one of the signatory to ensure the gender justice across all the sections of society.
Unfortunately, contrary to this promised right of eliminating gender based discriminations; the recent report of World Economic Forum (WEF) on ‘Global Gender Gap 2016’ ranks Pakistan at 143 the ‘Second Worst’ country on gender inequality among the worlds’ 144 countries followed by Yemen. And the million dollar questions is, could this be justifiable with Pakistan’s narrative on the struggle of meeting Millennium Development Goals 2030?

Tracing out the headways of men and women equality, the report has focused on the areas of educational advancement, health and survival, economic opportunities as well as political empowerment, and since its first report on ‘Global Gender Gap – 2006’ of the WEF, compared to other South Asian Countries, Pakistan was ranked on 112, and since then it constantly declined year by year from 135th in 2013, 141st in 2014 and 143rd in 2015.

The major contribution in gender equality gap is deeply rooted in patriarchal values, with the connotations of family, tribal, feudal as well as the religious fundamentalist support. Even though during our routine life – merely on outdated conventional & faith based justifications girls education is still supposed as defame & most of us have been very reluctant to talk about women rights/ emancipation & we deliberately turned blind eye over the menace of gender based imparities and this has distorted the fabric of family canvas of Pakistani society.

And what else the disgrace would be in a state or country where so called Jirgas decide the fate of innocent (minor) girls given as – a fine called wani (forced to marriage in rival family) against the decision of any clash between two families, clans or tribes. Dealing with such menaces, despite of women protection laws, either national or international, government institutions seems to be helpless and dysfunctional before feudal control, patriarchal mindset, tribal customs & religious extremists.

As policy making institutions are driven by feudal lords who control the authorities, their sustainability is also linked with tribal, religious and patriarchal systems. Thriving on the struggle of womens’ emancipation, the fight of some women human rights activists accompanied with lawyers and few politicians had made some daunting change; perhaps it needs wider societal recognition.

There is no doubt that the WEF report on Pakistans’ state of gender imparities has also unmasked the countries’ democratic delusion towards the protection of human rights as well as gender development rhetoric, and the issues must be addressed with effective enforcement of laws by government machinery with active support and collaboration of civil society, academia, media and human rights defenders.

Ref: https://www.countercurrents.org/2016/11/06/gender-disparities-in-pakistan-unmasking-the-democratic-delusion/

Irshad Soomro is a Pakistani Human Rights activist. Email: irshadsoomro97@yahoo.com

50% children out of schools

50% children out of schools: minister

KARACHI: Sindh Minister for Social Welfare Shamim Mumtaz said on Monday that half of children population was out of schools in Pakistan, adding that society would be sensitised on child issues so as to ensure protection of child rights enshrined in UN charter.

The minister said that on the occasion of Universal Children Day falling on November 20, here at her office. Social Welfare Secretary Dr Shireen Mustafa, Social Welfare Deputy Director Muhammad Raheem Lakho, Child Welfare Deputy Director Fozia Masoom and others attended the meeting.

Shamim said children are our future and called upon civil society and parents in particular to play their role in protecting children rights and imparting best possible education and training to children to enable them to face the challenges of modern era.

She directed officers to make arrangements for celebrating child week from 14th November in connection with Universal Children Day falling on November 20th adding that seminars, walks, workshops, sports and speech competition should be organised to create awareness on child protection issues at district level throughout province.

In this regard, she said that banners, pamphlets, posters and awareness campaign on print and electronic media should also be initiated. She also directed to select a wall in each district of the province, and children should be asked to pen UN Child protection articles on it.

When Being Counted Can Lead to Being Protected.

 

hijraON THE

EVENING of May 22, Alesha, a 23-year-old transgender woman and human rights activist in Peshawar, the capital of Pakistan’s northwestern Khyber Pakhtunkhwa province, received a phone call from some transgender friends. A local gang was demanding money and threatening them with violence if they didn’t pay — so Alesha rushed to the scene to help.

The confrontation turned violent, and the gang shot her six times at close range and left her for dead. The friends rushed Alesha to a hospital — but it was no refuge. For six hours, doctors debated — even jeering at Alesha’s friends as she lay bleeding — whether to put her in the male or female ward. Activists protested vehemently, even getting provincial politicians to stop by, but the wait was too long and Alesha died.

Alesha was a member of TransAction Khyber Pakhtunkhwa, a nascent network of transgender and intersex women who have in recent years begun more vocal advocacy for their basic rights and safety. Their community has organized around the abject violence they face at the hands of local gangs, silence from the authorities responsible for protecting them, and indifference or incompetence from doctors meant to save their lives.

In addition to reactive campaigns to highlight the brutality the community faces almost daily, TransAction Khyber Pakhtunkhwa is on a mission of a different — though not unrelated — type: to be counted. The group has filed a petition at the Peshawar High Court seeking to postpone Pakistan’s federal census, originally due to begin in March but already delayed as a result of alleged political meddling over voting districts, until a promised third-gender column is added to the form. Echoing third-gender recognition campaigns from across the region, the activists are emphasizing a connection between the brutality of their daily lives and the lack of recognition from their government.

The group uses terms such as khawaja siras, hijra, intersex, and transgender for their identities — a mix of bodily and self-expression factors that do not confirm to typical notions of “male” and “female.” (There is considerable popular confusion over the terms. For example, in June, a group of Muslim clerics issued a decree that was widely reported to be a blessing for transgender women to marry; however, activists discovered, it was a rather narrow statement about intersex people under Islamic law.)

In South Asia, identity categories such as hijra — for people assigned male at birth who develop a feminine gender identity — have long been recognized culturally, if not legally. In recent years, activists have pursued the formal recognition of a third gender. Hijras’ traditional status, which included bestowing blessings at weddings, had provided some protection and a veneer of respect. However, rather than being viewed as equal to others before the law, they were regarded as exotic and marginal — an existence dictated by boundaries and limitations, not rights.

Pakistani law includes provisions to protect the rights of transgender people due to a 2011 Supreme Court judgment. In that decision, similar to those from other courts in South Asia, Pakistan’s Supreme Court called on all provincial governments to recognize the rights of transgender people. The judgment specifically called on the police to improve their response to cases involving transgender people, and on other officials to ensure the rights to basic education and employment. Some local governments have carried out parts of the court order, including by creating employment programs — for example, as tax collectors in Karachi.

Development experts,  international agencies, and governments are increasingly regarding the inclusion of sexual and gender minorities in population data sets as not only necessary and desirable, but also feasible. Data-informed decisions, after all, require including the population in question in the information-gathering phase. Or, as the United Nations Development Program put it: “When people are counted, no one is left behind.”

In 2011 Nepal included a third-gender category on its national census, and in 2011 India did as well. The first time around, such data gathering exercises are not necessarily accurate or robust; implementation issues, including the personal bias of enumerators, may inhibit full inclusion. However, the political victory of such inclusive measures should not be overlooked. For a population so deeply marginalized, inclusion on a national census can have immense symbolic value as well.

Pakistan is overdue for a national census — its last one was in 1998. Security concerns and alleged voting district manipulation lie behind repeated delays. Early this year, referencing the 2012 Supreme Court judgment, the Pakistan Bureau of Statistics indicated it had adjusted both the paper form and the computer software for the census to include a third-gender column. Within weeks, however, activists found that the final versions of the census forms, for reasons unknown, included only male and female options. In September, TransAction Khyber Pakhtunkhwa asked the Peshawar court to suspend the census until it included the third category — a move the provincial court can consider and even refer to a higher court.

The inclusion of a third gender on the census will not solve the crisis of violence and marginalization Pakistani transgender and intersex people are facing. Outright violence, employment discrimination, and abusive policeresponses will not be brought to an end by census forms. It is a crucial step, nonetheless, for those who wish to be recognized as something other than male or female. Progress on this front would be an important gesture from the government that it takes their plight seriously.

In the meantime, the brutality shows no sign of letting up, and the bigotry of some caregivers shows no sign of eroding.

On August 9, in Abbottabad, Khyber Pakhtunkhwa, a transgender woman named Sumbal was shot three times in the abdomen by unidentified assailants who were attempting to abduct and rape her. She was turned away at the district hospital; the staff said they only have two wards — male and female. The police only consented to register the case when faced with protests by activists. Sumbal survived the attack because she got medical care.

A gesture from the central government that Pakistanis can be counted as male, female, or a third gender would send a message that everyone counts equally — and that authorities from police to physicians should do their part to uphold basic security and dignity for all.

Ref: https://lareviewofbooks.org/article/when-being-counted-can-lead-to-being-protected-pakistans-transgender-and-intersex-activists/

When Being Counted Can Lead to Being Protected: Pakistan’s Transgender and Intersex Activists-By Kyle Knight

Transgender: A Biological issue or a Linguistic One?

It was only a short while back in 2011 that the Government of Pakistan added a third category of gender in the National Identity Cards, which means for the initial sixty-four years an entire gender had no identity. But the identity crisis for the trans community dates longer than the history of this country, it dates back to the British Raj which laid down the concrete foundations through which the origins of an entire community were to be erased for centuries to come.

According to the rules regarding societal proprieties being trans was an unnatural and immoral state of being and any person found ‘guilty’ of the sin was to be severely punished. It is important to note here that before the British Raj the trans community held a prestigious position in the Indian culture with associations to good luck and celebration. The sudden shift in the attitude of an entire nation towards a chunk of itself had a lot to do with the book of appropriate behaviors and civilization that the British brought along to preach to the brown skinned.

Transgender in pakistan

 

It is also important to note here that the language which has found its dominance over the entire world has no personal pronoun for the third gender, where there is one for both the female and male gender. It is therefore entirely possible that the culture set out to promote civilization and liberalism, which is now the advocate for acceptance and rights of the trans community and which has singled out cultures like that of Pakistan for stigmatizing the third gender, is responsible for the strong taboos attached to it.

Transgenders in Pakistan

Which brings us to the issue of whether the transgender issue is actually an issue or a linguistic dictation. While the common belief is that the transgender crisis is a biological problem indicating that the natural existing state of an individual is believed to be ‘unnatural’, a disease, a condition, a problem. Also indicating that the health of a perfectly normal human being is put into doubt due to the presence or absence of certain sex organs that the vast majority expects to be a certain way. The indication to a problem suggests a solution, a solution to being transgender. Why is it that nobody has ever told a man that there was a solution to his ‘condition’ and who decided that the transgender ‘condition’ needed a solution or a distinction in terms of humanity? Why is it that while applying for your National Identity Card in Pakistan you have to present a medical certificate proving that you are transgender? Why is it that no other sex is put under this humiliation?

Transgenders in Pakistan

What is it which brews such mistrust for the trans in the ‘normal’? Is it not language? The language which invaded the subcontinent and plundered at its culture replacing it with a confused, complexed and a more extreme one at the brunt of which were the peacocks of India forced to doubt their beauty and strength. Caged in imperialist normalcy and thrown into dark alleys protecting the ‘natural’ order of the British society from getting contaminated.

While one cannot deny the presence of religious misunderstanding and deep rooted cultural sexism while discussing the transgender ‘problem’ one can absolutely not rule out the possibility that the problem stems out of the word problem itself suggesting that it is entirely the result of a hangover from a foreign language.

Ref : https://www.maatitv.com/transgender-a-biological-fault-or-a-linguistic-one/

Prime Minister’s Youth Training Scheme

Prime Minister’s Youth Training Scheme

Brief Description

Aimed at training the educated youth of Pakistan through internship in private and public sector offices.

Eligibility Criteria

  • 16 years HEC recognized degree or equivalent.
  • Diploma of 3 years after Matric / FSc.
  • Madrassah graduates are also entitled to apply.
  • 50% of marks or 2.5 CGPA in final degree/diploma is the minimum threshold for selection of interns.
  • Age limit is upto 25 years on 25-10-2016.
  • Pakistani National.
  • There is no gender discrimination female candidates will be encouraged to apply.

Geographical Spread

All over Pakistan

Stipend

Rs.12,000 per month for 12 months

Number of Interns

50,000

Training Programme

Focal points in each private and public office will be responsible for ensuring effective use of the internees’ services

Areas of Training

All leading private sector firms/bodies and development sector organizations, federal, provincial and local government offices including educational institutions will be offered services of the internees

Allocation of Interns

Primarily, the allocation of interns will be made in accordance with the NFC award and FPSC’s recruitment criteria for provincial/regional quotas for all three years. The selection of Interns will be as per their domicile but can be placed in origination outside of their domicile region based on the demand profile and matching of applicant profile. Per year allocation of interns is as under

  • Budget Allocation 2015-18: 7851 Million
  • Data cleansing of 106,989 applicants is complete, out of which almost 44000 degree holders have been verified by HEC and almost 18000 Diploma holders have been verified by the respective Technical Education Boards.
  • M/O IPC has issued placement letters to 44000 successful interns based on their preferences and matching market demand.  Out of these 44000 interns, 33000 are degree holders whereas 11000 are diploma holders.

تحفظ حقوق نسواں بل کا مکمل متن

muslimwomensrights_fa_rszd

قومی اسمبلی میں پیش کردہ صورت میں مجموعہ تعزیرات پاکستان، مجموعہ ضابطہ فوجداری اور دیگر قوانین میں مزید ترمیم کرنیکا بلچونکہ دستور کا آرٹیکل ١١٤ اس امر کو یقینی بناتا ہے کہ شرف انسانی اور قانونکے تابع، گھر کی خلوت قابل حرمت ہو گی۔
چونکہ دستور کا آرٹیکل ٣٧ سماجی انصاف کو فروغ دینے اور سماجی برائیوں کا خاتمہ کرنے کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔
چونکہ یہ ضروری ہے کہ قانون کے غلط اور بیجا استعمال کے خلاف خواتین کی داد رسی کی جائے اور تحفظ فراہم کیا جائے اور ان کے استحصال کو روکا جائے۔
چونکہ اس بل کا مقصد ایسا قانون لانا ہے جو بالخصوص دستور کے بیان کردہ مقاصد اور اسلامی احکام سے مطابقت رکھتا ہو۔
چونکہ یہ قرین مصلحت ہے کہ بعدازیں ظاہر ہونے والی اغراض کے لئےمجموعہ تعزیرات پاکستان ١٨٦٠ء (ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٦٠ء) مجموعہ ضابطہ فوجداری ١٨٩٨ء (ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٩٨ء) قانون انفساخ ازواج مسلمانان ١٩٣٩ء (نمبر ٨ بابت ١٩٣٩ء) زناء کا جرم (نفاذ حدود) آرڈیننس، ١٩٧٩ء (نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء) اور قذف کا جرم (حد کا نفاظ) آرڈیننس، ١٩٧٩ء (نمبر ٨ مجریہ ١٩٧٩ء) میں مزید ترمیم کی جائے۔
لہذا بذریعہ ہذا حسب ذیل قانون وضع کیا جاتا ہے۔١- مختصر عنوان اور آغاز کا نفاذ:-
(١) یہ ایکٹ، قانون فوجداری ترمیمی (خواتین کا تحفظ) ایکٹ ٢٠٠٢ء کے نام سے موسوم ہو گا۔
(٢) یہ فی الفور نافذالعمل ہو گا۔

٢۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعہ کی شمولیت:-
مجموعہ تعزیرات پاکستان (ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء) میں جس کا حوالہ بعدازیں ‘مجموعہ قانون‘ کے طور پر دیا گیا، دفعہ ٣٦٥ الف کے بعد، حسب ذیل نئی دفعہ شامل کر دی جائے گی یعنی ۔۔۔
٣٦٥ ب۔ عورت کو نکاح وغیرہ پر مجبور کرنے کے لئے اغوا کرنا لے بھاگنا یا ترغیب دینا:-
جو کوئی بھی کسی عورت کو اس اردادے سے کہ اسے مجبور کیا جائے، یا یہ جانتے ہوئے اسے مجبور کرنے کا احتمال ہے کہ وہ اپنی مرضی کے خلاف کسی شخص سے نکاح کرے یا اس غرض سے کہ ناجائز جماع پر مجبور کی جائے یا پھسلائی یا اس امر کے احتمال کے علم سے کہ اسے ناجائز جماع پر مجبور کر لیا جائے یا پھسلا لیا جائے گا، لے بھاگے یا اغوا کر لے تو عمر قید کی سزا دی جائے گی اور جرمانے کا بھی مستوجب ہو گا اور جو کوئی بھی اس مجموعہ قانون میں تعریف کردہ تخریف مجرمانہ کے ذریعے یا اکتیار کے بیجا استعمال یا جبر کے کسی دوسرے طریقے کے ذریعے، کسی عورت کو کسی جگہ سے جانے کے لئے اس ارادے سے یا یہ جانتے ہوئے ترغیب دے کہ اس امر کا احتمال ہے کہ اسے کسی دوسرے شخص کے ساتھ ناجائز جماع پر مجبور کیا جائے گا یا پھسلا لیا جائے گا تو بھی مذکورہ بالا طور پر قابل سزا ہو گا۔

٣۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعہ کی شمولیت:-
مذکورہ مجموعہ قانون میں دفعہ ٣٦٧ کے بعد حسب ذیل نئی دفعہ شامل کر دی جائے گی یعنی ۔۔۔۔۔
٣٦٧ الف ۔ کسی شخص سے غیر فطری خواہش نفسانی کا نشانہ بنانے کی غرض سے اغوا کرنا یا لے بھاگنا:-
جو کوئی بھی کسی شخص کو اس غرض سے کہ مذکورہ شخص کسی شخص کی غیر فطری خواہش نفسانی کا نشانہ بنایا جائے یا اس طرح ٹھکانے لگایا جائے کہ وہ کسی شخص کی غیر فطری خواہش نفسانی کا نشانہ بننے کے خطرے میں پڑ جائے اس امر کے احتمال کے علم کے ساتھ مذکورہ شخص کو بایں طور پر نشانہ بنایا جائے گا یا ٹھکانے لگایا جائے گا، لے بھاگے یا اغوا کرے تو اسے موت یا پچیس سال تک کی مدت کے لئے قید سخت کی سزا دی جائے گی اور وہ جرمانے کا بھی مستوجب ہو گا۔

٤۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعات کی شمولیت:-
مذکورہ مجموعہ قانون میں دفعہ ٣٧١ کے بعد حسب ذیل نئی دفعات شامل کر دی جائیں گی یعنی ۔۔۔۔۔
٣٧١ الف ۔ کسی شخص کو عصمت فروشی وغیرہ کی اغراض کے لئے فروخت کرنا:-
جو کوئی بھی کسی شخص کو اس نیت سے کہ مذکورہ شخص کسی بھی وقت عصمت فروشی یا کسی شخص کے ساتھ ناجائز جماع کی غرض سے یا کسی ناجائز اور غیر اخلاقی مقصد کے لئے کام میں لگایا جائے گا یا استعمال کیا جائے گا یا اس امر کے احتمال کا علم رکھتے ہوئے کہ مذکورہ شخص کو کسی بھی وقت مذکورہ غرض کے لئے کام میں لگایا جائے گا یا استعمال کیا جائے گا، فروخت کرے، اجرت پر چلائے یا بصورت دیگر حوالے کرے تو اسے پچپن سال تک کی مدت کے لئے سزا دی جائے گی اور وہ جرمانے کا بھی مستوجب ہو گا۔
تشریحات۔
(الف) جب کوئی عورت کسی طوائف یا کسی شخص کو کسی چکلے یا مالک یا منتظم ہو فروخت کی جائے، اجرت پر دی جائے، بصورت دیگر حوالے کی جائے تو مذکورہ عورت کو اس طرح حوالے کرنے والے شخص کے متعلق تاوقتیکہ اس کے برعکس ثابت نہ ہو جائے یہ تصور کیا جائے گا کہ اس نے اسے اس نیت سے حوالے کیا تھا کہ اسے عمت فروشی کے مقصد کے لئے استعمال کیا جائے گا۔
(ب) دفعہ ہذا اور دفعہ ٣٧١ ب کی اغراض کے لئے ‘ناجائز جماع‘ سے ایسے اشخاص کے مابین جماع مراد ہے جو رشتہ نکاح میں منسلک نہ ہوں۔
٣٧١ ب ۔ کسی شخص کو عصمت فروشی وغیرہ کی اغراض سے خریدنا:-
جو کوئی بھی کسی شخص کو اس نیت سے کہ مذکورہ شخص کو کسی وقت عصمت فروشی کے لئے یا کسی شخص کے ساتھ ناجائز جماع کے لئے کسی ناجائز اور غیر اخلاقی مقصد کے لئے کام میں لگایا جائے گا یا استعمال کیا جائے گا، خریدے، اجرت پر رکھے یا بصورت دیگر اس کا قبضہ حصل کرے تو اسے پچیس سال کی مدت کے لئے سزائے قید دی جائے گی اور جرمانے کا بھی مستوجب ہو گا۔
تشریح:-
کوئی طوائف یا کوئی شخص جو کسی چکلے کا مالک یا منتظم ہو کسی عورت کو خریدے، اجرت پر رکھے یا بصورت دیگر اس کا قبضہ حاصل کرے تو تاوقتیکہ اس کے برعکس ثابت نہ ہو جائے یہ تصور کیا جائے گا کہ اس عورت پر اس نیت سے قبضہ کیا گیا تھا کہ اسے عصمت فروشی کے مقصد کے لئے استعمال کیا جائے گا۔

٥۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعہ کی شمولیت:-
مذکورہ مجموعہ قانون میں دفعہ ٣٧٤ کے بعد ذیلی عنوان ‘زنا بالجبر‘ کے تحت حسب ذیل نئی دفعات شامل کر دی جائیں گی، یعنی ۔۔
٣٧٥۔ زنا بالجبر:-
کسی مرد کو زنا بالجبر کا مرتکب کہا جائے گا جو ماسوائے ان مقدمات کے جو بعدازاں مستثنٰی ہوں، کسی عورت کے ساتھ مندرجہ ذیل پانچ حالات میں میں سے کسی میں جماع کرے۔
(اول) اس کی مرضی کے خلاف۔
(دوم) اس کی رضا مندی کے بغیر۔
(سوم) اس کی رضا مندی سے، جبکہ رضا مندی اس کو ہلاک یا ضرر کا خوف دلا کر حاصل کی گئی ہو۔
(چہارم) اس کی مرضی سے جبکہ مرد جانتا ہو کہ وہ اس کے نکاح میں نہیں ہے اور یہ کہ رضا مندی کا اظہار اس وجہ سے کیا گیا ہے کیونکہ وہ یہ باور کرتی ہے کہ مرد وہ دوسرا شخص ہے جس کے ساتھ اس کا نکاح ہونا وہ باور کرتا ہے یا کرتی ہے، یا
(پنجم) اس کی رضا مندی سے یا اس کے بغیر جبکہ وہ سولہ سال سے کم عمر کی ہو۔
تشریح:-
زنا بالجبر کے جرم کے لئے مطلوبہ جماع کے تعین کے لئے دخول کافی ہے۔‘
٣٧٦۔ زناءبالجبر کے لئے سزا:-
(١) جو کوئی زناءبالجبر کا ارتکاب کرتا ہے اسے سزائے موت یا کسی ایک قسم کی سزائے قید جو کم سے کم پانچ سال یا زیادہ سے زیادہ پچیس سال تک ہو سکتی ہے دی جائے گی اور جرمانے کی سزا کا بھی مستوجب ہو گا۔
(٢) جب زناءبالجبر کا ارتکاب دو یا زیادہ اشخاص نے بہ تائید باہمی رضامندی سے کیا ہو تو، ان میں سے ہر ایک شخص کو سزائے موت یا عمر قید کی سزا دی جائے گی۔

٦۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعہ کی شمولیت:-
مذکورہ مجموعہ قانون میں، بابت بیس میں، حسب ذیل نئی دفعہ شامل کر دی جائے گی یعنی ۔۔
٤٩٣ الف۔ کسی شخص کا فریب سے جائز نکاح کا یقین دلا کر ہم بستری کرنا:-
ہر وہ شخص جو فریب سے کسی عورت کو جس سے جائز طریق پر اس نے نکاح نہ کیا ہو، یہ باور کرائے کہ اس نے اس عورت سے جائز طور پر نکاح کیا ہے اور اسے یقین کے ساتھ ہم بستری پر آمادہ کرے تو اسے پچیس سال تک کے لئے قید سخت دی جائے گی اور جرمانے کا بھی مستوجب ہو گا۔

٧۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعہ کی شمولیت:-
مذکورہ مجموعہ قانون میں دفعہ ٤٩٦ کے بعد، حسب ذیل نئی دفعہ شامل کر دی جائے گی، یعنی ۔۔
٤٩٦ الف۔ کسی عورت کو مجرمانہ نیت سے ورغلانہ یا نکال کر لے جانا یا روک رکھنا۔
جو کوئی بھی کسی عورت کو اس نیت سے نکال کر لے جائے یا ورغلا کر لے جائے کہ وہ کسی شخص کے ساتھ ناجائز جماع کرے یا کسی عورت کو مذکورہ نیت سے چھپائے یا روک رکھے تو اسے سات سال تک کی مدت کے لئے کسی بھی قسم کی سزائے قید دی جائے گی اور جرمانے کا بھی مستوجب ہو گا۔

٨۔ ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء میں نئی دفعہ کی شمولیت:-
مذکورہ مجموعہ قانون میں، دفعہ ٥٠٢ الف کے بعد، حسب ذیل نئی دفعہ شامل کر دی جائے گی، یعنی ۔۔۔
٥٠٢ ب۔ زناءبالجبر کی صورت میں کسی عورت کی شناخت کی تشہیر کرنا:-
اگر کوئی زناءبالجبر کے کسی مقدمے کی تشہیر کرتا ہے جس کے ذریعے کسی عورت یا اس کے خاندان کے کسی فرد کی شناخت کو ظاہر کرے تو اسے چھ ماہ تک کی سزائے قید یا جرمانہ یا دونوں سزائیں دی جائیں گی۔

٩- ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٩٨ء میں نئی دفعات کی شمولیت:-
مجموعہ ضابطہ فوجداری ١٨٩٨ء (ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٩٨ء) میں دفعہ ٢٠٣ کے بعد، حسب ذیل نئی دفعات شامل کر دی جائیں گی، یعنی ۔۔۔
٢٠٣ الف ۔ زناء کی صورت میں نالش:-
(١) کوئی عدالت زناء کے جرم (نفاظ حدود) آرڈیننس، ١٩٧٩ء (نمبر مجریہ ١٩٧٩ء) کی دفعہ ٥ کے تحت کسی جرم کی سماعت نہیں کرے گی ماسوائے اس نالش کے جو کسی اختیار سماعت رکھنے والی مجاز عدالت میں دائر کی جائے۔
(٢) کسی نالش جرم کا اختیار سماعت رکھنے والی عدالت کا افسر صدارت کنندہ فوری طور پر مستغیث زناء کے فعل کے کم از کم چار چشم دید بالغ گواہوں کی حلف پر جرم کے لئے ضروری جانچ پڑتال کرے گا۔
(٣) مستغیث اور عینی گواہوں کی جانچ پڑتال کرنے کے لئے مواد کو تحریر تک محدود کر دیا جائے گا اور اس پر مستغیث اور عینی گواہوں کے علاوہ عدالت کے افسر صدارت کنندہ کے بھی دستخط ہوں گے۔
(٤) اگر عدالت کے افسر صدارت کنندہ کی یہ رائے ہو کہ کاروائی کے لئے کافی وجہ موجود ہے تو عدالت ملزم کی اصالتاَََََََ حاضری کے لئے سمن جاری کرے گا۔
(٥) کسی عدالت کا افسر صدارت کنندہ جس کے روپرو نالش دائر کی گئی ہو یا جس کو یہ منتقل کی گئی ہو اگر وہ مستغیث اور چار یا زائد عینی گواہوں کے حلفیہ بیانات کے بعد یہ فیصلہ دے کہ کاروائی کے لئے کافی وجہ موجود نہیں ہے، نالش کو خارج کر سکے گا اور ایسی صورت میں وہ اس کی وجوہات قلمبند کرے گا۔
٢٠٣ ب قذف کی صورت میں نالش:-
(١) دفعہ ٦ کی ذیلی دفعہ (٢) کے تابع، کوئی عدالت قذف کا جرم (نفاظ حد) آرڈیننس ١٩٧٩ء (نمبر ٨ مجریہ ١٩٧٩ء) کی ذیلی دفعہ ٧ کے تحت کسی جرم کی سماعت نہیں کرے گی ماسوائے اس نالش کے جو اختیار سماعت رکھنے والی مجاز عدالت میں دائر کی جائے۔
(٢) کسی نالش جرم کا اختیار سماعت رکھنے والی عدالت کا افسر صدارت کنندہ فوری طور پر مستغیث کی قذف کے فعل کے جرم میں ضروری جانچ پڑتال کرے گا۔
(٣) مستغیث کی جانچ پڑتال کے مواد کو تحریر تک محدود کر دیا جائیگا اور اس پر مستغیث کے علاوہ افسر صدارت کنندہ کے بھی دستخط ہوں گے۔
(٤) اگر عدالت کے افسر صدارت کنندہ کی یہ رائے ہو کہ کاروائی کے لئے کافی وجہ موجود ہے تو عدالت ملزم کی اصالتاَََََََ حاضری کے لئے سمن جاری کرے گا۔
(٥) کسی عدالت کا افسر صدارت کنندہ جس کے روپرو نالش دائر کی گئی ہو یا جس کو یہ منتقل کی گئی ہو اگر وہ مستغیث کے حلفیہ بیانات پر غور کرنے کے بعد یہ فیصلہ دے کہ کاروائی کے لئے کافی وجہ موجود نہیں ہے،تو نالش کو خارج کر سکے گا اور ایسی صورت میں وہ اس کی وجوہات قلمبند کرے گا۔

١٠۔ ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٩٨ء کے جدول دوم کی ترمیم:-
مجموعہ ضابطہ فوجداری ١٨٩٨ء (ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٩٨ء) میں دول دوم میں ۔۔۔

١١۔ آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء کی نئی دفعہ ٢ کی ترمیم:-
(١) زناء کے جرم (نفاظ حدود) آرڈیننس ١٩٧٩ء (آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء) میں دفعہ ٢ میں شقات (ج) اور (ہ) حذف کر دی جائیں گی۔

١٢۔ آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء کی دفعہ ٣ کا حذف:-
زناء کا جرم (نفاظ حدود) آرڈیننس، ١٩٧٩ء (آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء) کی دفعہ ٣ کو حذف کر دیا جائیگا۔

١٣۔ آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء کی دفعہ ٤ کی ترمیم:-
زناء کا جرم (نفاظ حدود) آرڈیننس ١٩٧٩ء (آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء میں دفعہ ٤ میں لفظ ‘جائز طور پر‘ اور مذکورہ دفعہ کے آخر میں تشریح کو حذف کر دیا جائیگا۔

١٤۔ آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء کی دفعات ٦ اور ٧ کا حذف کرنا:-
زناء کا جرم (نفاظ حدود) آرڈیننس ١٩٧٩ء (آرڈیننس نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء) کی دفعات ٦ اور ٧ کو حذف کر دیا جائے گا۔

بیان اغراض و وجوہ۔
اسلامی جمہوریہ پاکستان کے مسملہ دستوری مقاصد میں سے ایک یہ ہے کہ مسلمانوں کو اسلامی تعلیمات اور مقتضیات کے مطابق جیسا کہ قرآن پاک اور سنت میں موجود ہے۔ بحثیت انفرادی اور اجتماعی زندگیاں گزارنے کے قابل بنایا جائے۔
چنانچہ دستور، اس امر کی تاکید کرتا ہے کہ موجودہ تمام قوانین کو اسلامی احکام کے مطابق جس طرح قرآن پاک اور سنت میں ان کا تعین کیا گیا ہے، دینا چاہیے۔
اس بل کا مقصد بالخصوص زناء اور قذف سے متعلق قوانین کو بالخصوص بیان کردہ اسلامی جمہوری پاکستان کے مقاصد اور دستوری ہدایت کے مطابق بنانا ہے اور خاص طور پر قانون کے بے جا اور غلط استعمال کے خلاف خواتین کی داد رسی کرنا اور انہیں تحفظ فراہم کرنا ہے۔
قرآن پاک میں زناء اور قذف کے جرائم کے بارے میں موجود ہے زناء اور قذف سے متعلق دو آرڈیننس اس اس حقیقت کے باوجود کہ قرآن اور سنت نے نہ تو ان جرائم کی وضاعت کی ہے اور نہ ہی ان کے لئے سزا مقرر کی ہے تاہم دیگر قابل سزا قوانین کے شمار میں اضافہ کرتے ہیں، زناء اور قذف کے لئے سزائیں قصاص کے کسی اصول کے بغیر یا ان جرائم کے لئے ثبوت کے کسی طریقے کی نشاندہی کئے بغیر نہیں دی جا سکتیں۔
کوئی جرم جس کا حوالہ قرآن پاک اور سنت میں نہیں یا جس کے لئے اس میں سزا کے بارے میں نہیں بتایا گیا وہ تعزیر ہے جو ریاستی قانون سازی کا موضوع ہے۔ یہ دونوں کام ریاست کے ہیں کہ وہ مذکورہ جرائم کی وضاعت کرے اور ان کے لئے سزاؤں کا تعین کرے۔ ریاست مذکورہ اختیار کو مکمل اسلامی ہم آہنگی کے ذریعے استعمال کرتی ہے جو ریاست کو وضاعت اور سزا ہر دو کا اختیار دیتا ہے، اگرچہ ، مذکورہ تمام جرائم کو دونوں حدود آرڈیننسوں سے نکال دیا گیا ہے اور مجموعہ تعزیرات پاکستان ١٨٦٠ء (ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء) جسے بعدازاں پی پی سی کا نام دیا گیا ہے میں مناسب طور پر شامل کر دیا گیا ہے۔
زناء کے جرم (نفاظ حد) آرڈیننس ١٩٧٩ء (نمبر ٧ مجریہ ١٩٧٩ء) جسے بعدازاں ‘زناء آرڈیننس‘ کا نام دیا گیا ہے کی دفعات ١١ تا ١٦ میں دیئے گئے جرائم تعزیر کے جرائم میں ہیں، ان تمام کو مجموعہ تعزیرات پاکستان ١٨٦٠ء (ایکٹ نمبر ٤٥ بابت ١٨٦٠ء) کی دفعات ٣٦٥ب، ٣٦٧الف، ٣٧١الف، ٣٧١ب، ٤٩٣الف اور ٤٩٦الف کے طور پر شامل کیا گیا ہے۔ جرم قذف (نفاظ حد) آرڈیننس ١٩٧٩ء جسے بعدازاں ‘قذف آرڈیننس‘ کا نام دیا گیا ہے کی دفعات ١٢ اور ١٣ کو حذف کیا گیا ہے، یہ مذکورہ آرڈیننس کی دفعہ ٣ میں قذف کی تعریف کے طور پر کیا گیا ہے جو طبع شدہ اور کنندہ شدہ مواد کی طباعت یا کنندہ کاری یا فروخت کے ذریعے ارتکاب کردہ قذف کو کافی تحفظ دیتی ہے۔ مذکورہ تعزیری جرائم میں سے کسی کی آئینی تعریف کے استعمال میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی ہے یا ان کے لئے مقرر کی گئی سزا کو محفوظ رکھا گیا ہے۔ ان تعزیری جرائم کے لئے کوڑوں کی سزا کو حذف کیا گیا ہے جیسا کہ قرآن اور سنت میں ان جرائم سے متعلق کوئی سزا نہیں ہے۔ ریاست کو یہ اختیار ہے کہ وہ اسلام کے منصفانہ نظریئے کے مطابق اس میں تبدیلی لائے۔ یہ پی پی سی کے مطابق اور شائشتگی کے معئار کو قائم کرنے کے لئے ہے جس سے معاشرے کی کامل ترقی کی نشاندہی ہوتی ہے۔ زناء اور قذف کے آرڈیننس پر شہریوں کی طرف سے بالعموم اور اسلامی اسکالروں اور خواتین کی طرف سے بالخصوص سخت تنقید کی گئی۔ تنقید کے کئی موضوع تھے، ان میں زناء کے جرم کو زناء بالجبر (عصمت دری) کے ساتھ ملانا شامل ہے۔ اور دونوں کے لئے ثبوت اورسزا کی ایک ہی قسم رکھی گئی ہے۔ یہ بے جا سہولت دیتا ہے کوئی عورت جو عصمت دری کو ثابت نہیں کر سکتی اس پر اکثر زناء کا استغاثہ دائر کر دیا جاتا ہے، زناء بالجبر (عصمت دری) کے لئے زیادہ سے زیادہ سزا کے ثبوت کی ضرورت صرف اتنی ہے جتنی کہ زناء کے لئے ہے۔ یہ اول الذکر کو ثابت کرنے کے لئے تقریبا ناممکن بنا دیتا ہے۔
جب کسی مرد کے خلاف عصمت دری کے استغاثہ میں ناکامی ہو لیکن طبی معائنے سے جماع یا حمل کی یا بصورت دیگر تصدیق ہو جائے تو عورت کو چار عینی گواہوں کے نہ ہونے سے زناء کی سزا حد کے طور پر نہیں دی جاتی بلکہ تعزیر کے طور پر دی جاتی ہے، اس شکایت کو بعض اوقات اعتراف تصور کیا جاتا ہے۔
قرآن اور سنت زناء کے لئے تعزیری سزا کے مقتنی نہیں ہیں۔ یہ آرڈیننس کا مسودہ تیار کرنے والوں کے ذاتی خیالات پر مبنی ہے اور قذف کے جرائم کے لئے تعزیری سزائیں نہ صرف اسلامی اصولوں کے منافی ہیں بلکہ استحصال اور نا انصافی کو جنم دیتی ہیں، انہیں ختم کیا جا رہا ہے۔ دستوری تعزیرات کو واضح اور غیر مبہم ہونا چاہیے، ممنوعہ اور غیر ممنوعہ کے درمیان واضح حد مقرر ہو۔ شہری اس سے آگاہ ہوں، وہ اپنی زندگی اور طور طریقوں کو ان روشن رہنما اصولوں کو اپناتے گزار سکیں لہذا ان میں وہ اور متعلقہ قوانین مین غیر واضح تعریفات کی وضاعت کی جا رہی ہے اور جہاں یہ ممکن نہیں ہے انہیں حذف کیا جا رہا ہے۔ اس کا مقصد صرف یہ ہے کہ غیر محتاط شہریوں کو تعزیری قوانین کے غیر دانشمندانہ استعمال سے تحفظ بہم پہنچایا جائے۔ زناء آرڈیننس ‘نکاح‘ کی جائز نکاح کے طور پر تعریف کرتا ہے، بالخصوص دیہی علاقوں میں نکاح بالعموم اور طلاق کو بالخصوص رجسٹر نہیں کیا جاتا۔ کسی شخص پر زناء کا الزام لگانے کے لئے دفاع میں ‘جائز نکاح‘ کا تعین مشکل ہو جاتا ہے۔ رجسٹریشن نہ کرانا اس کے دیوانی منطقی نتائج میں صرف یہی کافی ہے کوئی نکاح رجسٹر نہ کرایا جائے یا کسی طلاق کی تصدیق کو تعزیری منطقی نتائج سے مشروط نہ کیا جائے۔ اس میں اسلامی ہم آہنگی پائی جاتی ہے۔ جب کسی جرم کے ارتکاب میں کوئی شبہ پایا جائے تو حد کو نافذ نہ کیا جائے، قانون مذکورہ مقدمات میں غلط استعمال کی وجہ سے سابقہ خاوندوں اور معاشرے کے دیگر ارکان کے ہاتھوں میں ظلم و ستم کا کھلونا بن گیا ہے۔
تین طلاقیں دیئے جانے کے بعد عورت اپنے میکے چلی جاتی ہے وہ دوران عدت جاتی ہے، کچھ ہی دنوں کے بعد خاندان کے لوگ نئے ناطے کا انتظام کر دیتے ہیں اور وہ شادی کر لیتی ہے، اس وقت خاوند یہ دعوٰی کرتا ہے کہ یئت ہائے مجاز کی طرف سے طلاق کی تصدیق کے بغیر نکاح ختم نہیں ہوا اور زناء کا مقدمہ دائر کر دیتا ہے یہ ضروری ہے کہ اسے ختم کرنے کے لئے اس تعریف کو حذف کر دیا جائے۔
زناء بالجبر (عصمت دری) کے جرم کے لئے کوئی حد موجود نہیں ہے، یہ تعزیری جرم ہے، لہذا عصمت دری کی تعریف اور سزا کو پی پی سی میں بالترتیب دفعات ٣٧٥ اور ٣٧٦ میں شامل کیا جا رہا ہے۔ جنس کی مبہم تریف میں ترمیم کی جا رہی ہے تاکہ یہ واضح کیا جا سکے کہ عصمت دری ایک جرم ہے جس کا ارتکاب مرد عورت کے ساتھ کرتا ہے۔ عصمت دری کا الزام لگانے کے لئے عورت کی مرضی دفاع کے طور پر استعمال کی جاتی ہے۔ یہ انتظام کیا جا رہا ہے کہ اگر عورت کی عمر ١٦ سال سے کم ہو تو مذکورہ مرضی کو دفاع کے طور پر استعمال نہ کیا جائے یہ کمزور کو تحفظ دینے کی ضرورت ہے، جس کی قرآن بار بار تاکید کرتا ہے اور بین الاقوامی قانونی ذمہ داری کے اصولوں میں ہم آہنگی پیدا کرتا ہے۔
اجتماعی زیادتی کی سزا موت ہے۔ اس سے کم سزا نہیں رکھی گئی ایسے مقدمات کی سماعت کرنے والی عدالتوں کا یہ مشاہدہ ہے کہ بعض حالات میں ان کی یہ رائے ہوتی ہے کہ کسی شخص کو بری نہیں کیا جا سکتا جبکہ عین اس وقت مقدمت کے حقائق اور حالات کے مطابق سزائے موت جائز نہیں ہوتی نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ مذکورہ مقدمات میں ملزم کو بری کرنے پر مجبور ہوتے ہیںاس معاملے کو نمٹانے کے لئے سزائے موت کے متبادل کے طور پر عمر قید کی سزا کا اضافہ کیا جا رہا ہے۔
تعزیر زناء بالجبر (عصمت دری) اور اجتماعی زیادتی کی قانونی کاروائی کے لئے طریقہ کار، اس طرح دیگر تمام تعزیرات، پی پی سی کے تحت تمام جرائم کو مجموعہ ضابطہ فوجداری ١٨٩٨ء (ایکٹ نمبر ٥ بابت ١٨٩٨ء) بعدازیں ‘سی آر پی سی‘ کے ذریعے منضبط کیا گیا ہے۔
لعان انفساخ نکاح کی شکل ہے کوئی عورت جو کہ اپنے شوہر کی طرف سے بدکاری کی ملزمہ ہو اور اس الزام سے انکاری ہو اپنی ازواجی زندگی سے علیحدگی کا مطالبہ کر سکتی ہے۔ لعان سے متعلق قذف آرڈیننس کی دفعہ ١٤ اس کے لئے طریقہ کار فراہم کرتی ہے۔ انفساخ نکاح کی آئینی تعزیر میں کوئی جگہ نہیں ہے۔ اسی طرح، قانون انفساخ ازواج مسلمانان، ١٩٣٩ء (نمبر٨ بابت ١٩٣٨ء) کے تحت لعان کو طلاق کی وجہ کے طور پر متعارف کرایا گیا ہے۔
زناء اور قذف کی تعریف ویسی ہی رہے گی جیسا کہ زناء اور قذف آرڈیننسوں میں ہے۔ نیز زناء اور قذف دونوں کے لئے سزائیں ایک جیسی ہی ہوں گی۔
زناء سگین جرم ہے جو کہ لوگوں کو اخلاق کو بگاڑتا ہے اور پاکدامنی کے احساس کو تباہ کرتا ہے۔ قرآن زناء کو لوگوں کے اخلاق کے برعکس ایک جرم ٹھہراتا ہے۔ چار چسم دید گواہوں کی ضرورت بلا شرکت غیرے صریحاً غیر معمولی بار نہیں ہے۔ یہ بھی دعوٰٰی ہے کہ اگر حدیث کے برعکس ہو، ‘اللہ ان لوگوں کو پسند نہیں کرتا جو اپنے گناہوں کو چھپاتے ہیں‘ جو کسی عمل کا ارتکاب اس طرح غل غپاڑہ کی صورت میں کرتے ہیں تاکہ طار آدمی اس کو دیکھ لیں، البتہ معاشرے کو بہت سنگین نقصان ہو گا۔ اسی وقت قرآن راز داری کو تحفظ دیتا ہے، بت بنیاد اندازوں سے روکتا ہے اور تحقیقات کرنے اور دوسروں کی زندگی میں دخل اندازی سے منع کرتا ہے۔ اس لئے زناء کے ثبوت کی ناکامی کی وجوہ کی بنا پر قذف کے لئے سزا عائد ہو جاتی ہے (زناء کے متعلق جھوٹا الزام) قرآن شکایت کنندہ سے زناء کو ثابت کرنے کے لئے چار چشم دید گواہ مانگتا ہے۔ شکایت کنندہ اور شہادت دینے والوں کو اس جرم کی سنگینی سے بخوبی آگاہی ہونی چاہئے کہ اگر انہوں نے جھوٹا الزام لگایا یا الزام کے شک کو دور نہ کر سکے تو وہ قذف کے لئے سزا وار ہوں گے۔ ملزم زناء کی قانونی کاروائی میں ناکامی کے نتیجے میں دوبارہ از سر نو قانونی کاروائی شروع نہیں کرے گا۔
زناء آرڈیننس خواتین پر استغاثہ کا بے جا استعمال کرتا ہے، خاندانی تنازعات کو طے کرنے اور بنیادی انسانی حقوق اور بنیادی آزادیوں سے انحراف کرتا ہے۔ زناء اور قذف کے ہر دو مقدمات میں اس کے بے جا استعمال پر نظر رکھنے کے لئے مجموعہ ضابطہ فوجداری میں ترمیم کی جا رہی ہے تاکہ صرف سیشن عدالت ہی کسی درخواست پر مذکورہ مقدمات میں سماعت کا اختیار استعمال کر سکے۔ اسے قابل ضمانت جرم قرار دیا گیا ہے تاکہ ملزم دوران سماعت جیل میں یاسیت کا شکار نہ رہے۔ پولیس کو کوئی اختیار نہیں ہو گا کہ وہ مذکورہ مقدمات میں کسی کو گرفتار کر سکے تاوقتیکہ سیشن عدالت اس کی اجازت نہ دے اور مذکورہ ہدایات ماسوائے عدالت میں حاضری کو یقینی بنائے جانے یا کسی سزا دہی کی صورت کے جاری نہیں کی جا سکتیں، مجموعہ تعزیرات کی صورت میں، عورت یا اس کے خاندان کے کسی فرد کی تشہیر نہیں ہو گی اور اس کی خلاف ورزی کی صورت میں چھ ماہ تک کی سزائے قید یا جرمانہ یا دونوں سزائیں دی جائیں گی۔
مذکورہ تمام ترامیم کا بنیادی مقصد زناء اور قذف کو اسلامی احکام کے مطابق قابل سزا بنانا ہے۔ جیسا کہ قرآن اور سنت میں دیا گیا ہے۔ استحصال سے روکنا، پولیس کے بے جا اختیارات سے روکنا اور انصاف اور مساویانہ حقوق پر مبنی معاشرے کو تشکیل دیتا ہے۔